Sufinama

محبت میں بھی اب سود و زیاں تک بات آ پہنچی

عبدالمنان طرزی

محبت میں بھی اب سود و زیاں تک بات آ پہنچی

عبدالمنان طرزی

MORE BYعبدالمنان طرزی

    محبت میں بھی اب سود و زیاں تک بات آ پہنچی

    کہاں کی بات تھی لیکن کہاں تک بات آ پہنچی

    تحمل کی مرے کیا داد تم اب بھی نہیں دو گے

    کہ جوش ضبط سے اشک رواں تک بات آ پہنچی

    کبھی دیکھا تھا محفل میں نگاہ لطف سے اس نے

    قیامت ہے کہ لوگوں کی زباں تک بات آ پہنچی

    خود اپنے اشکوں نے رسوا کیا مجھ کو سر محفل

    دیار دوستاں سے دشمناں تک بات آ پہنچی

    یہ فرسودہ غزل اہل سخن کی بزم میں طرزیؔ

    اشک دل کی خلش تھی اور بیاں تک بات آ پہنچی

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے