Sufinama

سنت وانی

سنتوں کے اقوال کو سنت بانی کہا جاتا ہے۔ اس میں روحانی تعلیمات کو اشعار کی شکل میں پیش کیا جاتاہے۔ اس کی کچھ شکلوں کو دوہا، شبد وغیرہ بھی کہا جاتا ہے۔ سنت بانی کی کچھ دوسری شکلیں بھی یہاں ہیں جو اب تک عوام کی دسترس سے باہر ہیں۔ اس سیکشن میں کچھ بڑے شعرا کی نظمیں بھی شامل ہیں جو یقینی طورپرآپ کی روح کو غذا فراہم کریں گی۔

sant

دوہے

دوہا ہندی، اردو شاعری کی ممتاز اور مقبول صنف سخن ہے جو زمانہ قدیم سے تا حال اعتبار رکھتی ہے۔ دوہا ہندی شاعری کی صنف ہے جو اب اردو میں بھی ایک شعری روایت کے طور پر مستحکم ہو چکی ہے۔ اس کا آغاز ساتویں صدی اور آٹھویں صدی کا زمانہ بتایا جاتا ہے۔ دوہرا اور دوپد اس کے دوسرے نام ہیں۔

تمام

پد

پد اشعار کی ایک صنف ہے۔ اشعار میں ردیف و قافیہ کی ایک مقررہ تعداد یا ترتیب ہوتی ہے۔ پدوں میں اس طرح کی کوئی قید نہیں ہوتی۔ یہ ان قیود سےآزاد ہوتے ہیں۔ اس لیے قدیم شعرا نے پدوں کے عنوان پر راگوں کے ہی نام دئے ہیں۔ پدوں کی روایت ہندی ادب میں ودیا پتی سے شروع ہوئی جو بھکتی شاعری سے لے کر چھایاواد میں مہادیوی ورما تک بلا روک ٹوک جاری رہی۔

تمام

شبد

گورکھ ناتھ کی 'سبدی' کو بعد کے سنت شاعروں نے 'سبد' بنایا تھا۔ سنتوں کی خود شناسی کو 'سبد' کہتے ہیں۔ سبد گیت ہیں اور راگوں اور راگنیوں میں بندھے ہوئے ہوتے ہیں۔ 'سبد' کا استعمال اندرونی تجربے کے اظہار کے لیے ہوتا ہے۔

تمام

ساکھی

اودھی اور برج کی ایک صنف سخن۔ جنگی کارنامہ یا رزمیہ نظم کو بھی ساکھی کہتے ہیں۔

تمام

باؤل گان

باؤل گان کا بڑا سرمایہ صوفی نامہ پر دیکھئے۔

تمام