Sufinama

کون سا گھر ہے کہ اے جاں نہیں کاشانہ ترا اور جلوہ خانہ ترا

بیدم شاہ وارثی

کون سا گھر ہے کہ اے جاں نہیں کاشانہ ترا اور جلوہ خانہ ترا

بیدم شاہ وارثی

MORE BYبیدم شاہ وارثی

    کون سا گھر ہے کہ اے جاں نہیں کاشانہ ترا اور جلوہ خانہ ترا

    مے کدہ تیرا ہے کعبہ ترا بت خانہ ترا سب ہے جانانہ ترا

    تو کسی شکل میں ہو میں ترا شیدائی ہوں تیرا سودائی ہوں

    تو اگر شمع ہے اے دوست میں پروانہ ترا یعنی دیوانہ ترا

    مجھ کو بھی جام کوئی پیر خرابات ملے تیری خیرات ملے

    تا قیامت یوں ہی جاری رہے پیمانہ ترا رہے مے خانہ ترا

    تیرے دروازے پہ حاضر ہے ترے در کا فقیر اے امیروں کے امیر

    مجھ پہ بھی ہو کبھی الطاف کریمانہ ترا لطف شاہانہ ترا

    صدقہ مے خانے کا ساقی مجھے بے ہوشی دے خود فراموشی دے

    یوں تو سب کہتے ہیں بیدمؔ ترا مستانہ ترا اب ہوں دیوانہ ترا

    مآخذ:

    • کتاب : نورالعین: مصحف بیدمؔ (Pg. 115)
    • Author : بیدم شاہ وارثی
    • مطبع : شیخ عطا محمد، لاہور (1935)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY