Sufinama

جو مٹا ہے تیرے جمال پر وہ ہر ایک غم سے گزر گیا

فنا بلند شہری

جو مٹا ہے تیرے جمال پر وہ ہر ایک غم سے گزر گیا

فنا بلند شہری

MORE BYفنا بلند شہری

    جو مٹا ہے تیرے جمال پر وہ ہر ایک غم سے گزر گیا

    ہوئیں جس پہ تیری نوازشیں وہ بہار بن کے سنور گیا

    تری مست آنکھ نے اے صنم مجھے کیا نظر سے پلا دیا

    کہ شراب خانے اجڑ گئے جو نشہ چڑھا تھا اتر گیا

    ترا عشق ہے مری زندگی ترے حسن پہ میں نثار ہوں

    ترا رنگ آنکھ میں بس گیا ترا نور دل میں اتر گیا

    کہ خرد کی فتنہ گری وہی لٹے ہوش چھا گئی بے خودی

    وہ نگاہ مست جہاں اٹھی مرا جام زندگی بھر گیا

    در یار تو بھی عجیب ہے ہے عجیب تیرا خیال بھی

    رہی خم جبین نیاز بھی مجھے بے نیاز بھی کر گیا

    ترے دید سے اے صنم چمن آرزؤں کا مہک اٹھا

    ترے حسن کی جو ہوا چلی تو جنوں کا رنگ نکھر گیا

    مجھے سب خبر ہے مرے صنم کہ رہ فناؔ میں حیات ہے

    اسے مل گئی نئی زندگی ترے آستاں پہ جو مر گیا

    مآخذ :
    • کتاب : دیوان فنا (Pg. 62)
    • Author : فنا بلند شہری
    • مطبع : مظفر آرٹ پرنٹرز (1992)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY