Sufinama

کس کو سناؤں حال غم کوئی غم آشنا نہیں

فنا بلند شہری

کس کو سناؤں حال غم کوئی غم آشنا نہیں

فنا بلند شہری

MORE BYفنا بلند شہری

    کس کو سناؤں حال غم کوئی غم آشنا نہیں

    ایسا ملا ہے درد دل جس کی کوئی دوا نہیں

    میری نماز عشق کو شیخ سمجھ سکے گا کیا

    اس نے در حبیب پہ سجدہ کبھی کیا نہیں

    مجھ کو خدا سے آشنا کوئی بھلا کرے گا کیا

    میں تو صنم پرست ہوں میرا کوئی خدا نہیں

    کیسے ادا کروں نماز کیسے جھکاؤں اپنا سر

    صحن حرم میں شیخ جی یار کا نقش پا نہیں

    کیا ہیں اصول بندگی اہل جنوں کو کیا خبر

    سجدہ روا کہاں پہ ہے سجدہ کہاں روا نہیں

    مجھ سے شروع عشق میں مل کے جو تم بچھڑ گئے

    بات ہے یہ نصیب کی تم سے کوئی گلہ نہیں

    مجھ کو رہ حیات میں لوگ بہت ملے مگر

    ان سے ملا دے جو مجھے ایسا کوئی ملا نہیں

    اپنا بنا کے اے صنم تم نے جو آنکھ پھیر لی

    ایسا بجھا چراغ دل پھر یہ کبھی جلا نہیں

    عشق کی شان مرحبا عشق ہے سنت خدا

    عشق میں جو بھی مٹ گیا اس کو کبھی فناؔ نہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY