Sufinama

اس کے چہرے پہ خدا جانے یہ کیسا نور تھا

خواجہ رکن الدین عشقؔ

اس کے چہرے پہ خدا جانے یہ کیسا نور تھا

خواجہ رکن الدین عشقؔ

MORE BYخواجہ رکن الدین عشقؔ

    اس کے چہرے پہ خدا جانے یہ کیسا نور تھا

    ورنہ یہ دیوانگی کب عشق کا دستور تھا

    سرمۂ وحدت جو کھینچا عشق نے آنکھوں کے بیچ

    جون سا پتھر نظر آیا وہ کوہ طور تھا

    پاس آنے کو میرے بعد مسافت کچھ نہ تھی

    غور کر دیکھا تو میں ہی دل سے تیرے دور تھا

    لگ گیا ناگاہ اس پر یہ تیرا تیر نگاہ

    دل کا شیشہ جو بغل میں ہم نے دیکھا چور تھا

    دل کو تیرے دکھ دیا ہے عشقؔ کن نے ہم سے کہہ

    شوخ تھا بے باک تھا خوں خوار تھا مغرور تھا

    مأخذ :
    • کتاب : بہارمیں اردو کی صوفیانہ شاعری (Pg. 129)
    • Author : محمد طیب ابدالی
    • مطبع : اسرار کریمی پریس الہ آباد (1988)
    • اشاعت : First

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY