Sufinama

اس شان کرم کا کیا کہنا در پہ جو سوالی آتے ہیں

پرنم الہ آبادی

اس شان کرم کا کیا کہنا در پہ جو سوالی آتے ہیں

پرنم الہ آبادی

MORE BYپرنم الہ آبادی

    اس شان کرم کا کیا کہنا در پہ جو سوالی آتے ہیں

    اک تری کریمی کا صدقہ وہ من کی مرادیں پاتے ہیں

    خالی نہ رہی رحمت سے تری دکھ درد کے ماروں کی جھولی

    کیا تیرا کرم ہے در پہ تیری بھر دی ہے ہزاروں کی جھولی

    دن رات ہے منگتوں کا پھیرا کیا خوب سکھی ہے در تیرا

    ملتی ہے کرم کی بھیک انہیں دامن جو یہاں پھیلاتے ہیں

    اس در کی سخاوت کیا کہیے خالی نہ گیا منگتا کوئی

    محتاج یہاں جو آتے ہیں وہ جھولیاں بھر کے جاتے ہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نصرت فتح علی خان

    نصرت فتح علی خان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY