Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

کیوں نہ مایوس مرا ذوق فراواں ہو جائے

سیماب اکبرآبادی

کیوں نہ مایوس مرا ذوق فراواں ہو جائے

سیماب اکبرآبادی

MORE BYسیماب اکبرآبادی

    کیوں نہ مایوس مرا ذوق فراواں ہو جائے

    آدمی کی ہے یہ معراج کہ انساں ہو جائے

    عالم قدس یہی عالم امکاں ہو جائے

    کاش انسان کو انسان کا عرفاں ہو جائے

    عیش دنیا کی طرف اس کی نظر کیوں اٹھے

    ایک آنسو ہی جسے دولت داماں ہو جائے

    سادگی حسن کی ممکن ہے پریشاں نہ کرے

    عشق کی شان یہی ہے کہ پریشاں ہو جائے

    میں بلاؤں تو ہو تنگ اس پہ بساط کونین

    اور خود چاہے تو محفوظ رگ جاں ہو جائے

    دل کا انجام بہر حال فنا ہے سیمابؔ

    ہے جو بجھنے میں تکلف تو فروزاں ہو جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے