Sufinama

منقبت حضرت محبوب_سبحانی شاہ نظام اولیا

راقم دہلوی

منقبت حضرت محبوب_سبحانی شاہ نظام اولیا

راقم دہلوی

MORE BY راقم دہلوی

    غم دیں ہو نہ دنیا ہو نہ کچھ شرم گناہی ہو

    اگر رہبر نظام الدین محبوب الٰہی ہو

    گنہ کیسے معاتب کون کس کی رو سیاہی ہو

    جو تم بھی ہم زبان شافع عصیاں پناہی ہو

    نکلتا ہے زباں سے عالم بے اختیاری میں

    کہ تم کو وقت پرسش منصب بخشش گناہی ہو

    امید دستگیری نے بڑھایا اور بھی دل کو

    کہ تم پیش نگاہ داور عالم پناہی ہو

    پڑے ہیں اس تمنا میں نہ مرتے ہیں نہ جیتے ہیں

    قیامت کب ہو کب دیدار محبوب الہٰی ہو

    تمہیں مقبول یزدانی تمہیں محبوب سبحانی

    پیمبر کی نشانی ہو نظام دیں پناہی ہو

    تمہیں ماہ منور ہو تمہیں مہر درخشاں ہو

    ہلال شام آرا ہو جمال صبح گاہی ہو

    تمہیں رونق فروز مسند ایوان گیتی تھے

    تمہیں جنت مکانی ہو ارم آرام گاہی ہو

    تمہیں منظور آدم کے تمہیں مقصود عالم کے

    تمہیں شام تمنائی ہو صبح داد خواہی ہو

    ہمیں تم سے تعلق ہے نبیؐ سے واسطہ تم کو

    جب ایسے مرشد و مولا ہوں پھر کیوں رو سیاہی ہو

    توقع ہے توقع ہے گناہوں کی معافی کی

    قیامت میں ادھر تم ہو اودھر فضل الٰہی ہو

    تمہارے ہیں تمہارے ہیں تمہیں مرشد بنایا ہے

    کشاکش میں مریدوں پر بھی کچھ مرشد نگاہی ہو

    خدا سے پوچھ کر تم قافلہ سالار بن جانا

    جہاں کا قافلہ سوئے عدم جس وقت راہی ہو

    اگر موقع ملے کہنا خداوند دو عالم سے

    مریدوں کی ہمارے سب سے پہلے داد خواہی ہو

    کھلیں جب پیش داور نامۂ اعمال بندوں کے

    جہاں مہر پیمبر ہو تمہاری بھی گواہی ہو

    مٹے نام پیمبر پر رہے بندوں میں مولا کے

    ہمیں کیا ڈر ہے جب اتنا ثبوت بے گناہی ہو

    غلام مصطفیٰؐ ہم ہیں تمہارے بیعتی ہم ہیں

    کفایت ہے یہی حجت جو دونوں کی گواہی ہو

    نہ ڈر پرسش کا ہے اس کو نہ خوف داروگیر اس کو

    جو تھامے ہاتھ میں دامان محبوب الہٰی ہو

    خدایا بعد محشر کے اگر عالم ہو پھر پیدا

    تماشاگاہ عالم میں نظام الدیں کو شاہی ہو

    توقع ہے کہ تاب آفتاب حشر میں راقمؔ

    ادھر مولا کا دامن ہو اودھر ظل الٰہی ہو

    مآخذ:

    • کتاب : مرقع نعت (Pg. 21)
    • Author : راقمؔ دہلوی
    • مطبع : نظام المطابع، حیدرآباد

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY