Sufinama

نعت

MORE BY راقم دہلوی

    خدا کے سامنے روز جزا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    نوا سنج حقیقت لب کشا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    نہ ہوگا واں رسا کوئی رسا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    غلامان محمد مصطفیٰ ہوں گے تو ہم ہوں گے

    بہ خلوت گاہ یزدانی صبا تک بھی نہ پہنچے گی

    نوا بن کر دعا ہو کر رسا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    ہمیں پروا نہیں ہے تاب خورشید قیامت کی

    کہ زیر دامن خیر الورا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    ہم اپنی تشنہ کامی پر ابھی سے پھولے بیٹھے ہیں

    مئے کوثر سے پہلے آشنا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    غلامان محمدؐ ہم ہیں اور آزاد مشرب ہیں

    ہمیں شرم خطاؤں سے رہا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    جناب ساقیٔ کوثر لب کوثر صلا دیں گے

    صلائے عام کی پہلی صدا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    بہ حسرت ہم کو دیکھیں شہنشاہان خود آرا

    کہ فردوس بریں میں اون کی جا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    مسیح و خضر دیکھیں گے ہمیں حیرت نگاہی سے

    غلام مصطفیٰؐ زیر لوا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    شفاعت کا پیمبر کی بھروسا ہی نہیں راقمؔ

    دم پرسش گرفتار بلا ہوں گے تو ہم ہوں گے

    مآخذ:

    • کتاب : مرقع نعت (Pg. 17)
    • Author : راقمؔ دہلوی
    • مطبع : نظام المطابع، حیدرآباد

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY