Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

کمینِ بندۂ تو ما ہمہ مولیٰ توئی ما را

شاہ محسن داناپوری

کمینِ بندۂ تو ما ہمہ مولیٰ توئی ما را

شاہ محسن داناپوری

MORE BYشاہ محسن داناپوری

    دلچسپ معلومات

    منقبت در شان خواجہ سید بہاؤالدین نقشبند

    کمینِ بندۂ تو ما ہمہ مولیٰ توئی ما را

    گرفتہ فیض تو ہند و سمرقند و بخارا را

    1. تو ہی ہم لوگوں کی پناہ گاہ اور ہمارا آقا و مولی ہے، سمرقند و بخارا سب تمہارے دریائے کرم سے فیضیاب ہیں۔

    ز رحمت یک نظر بر حال زار کور چشماں کن

    کہ تابینند انوار خفی سر اخفا را

    2. کور چشموں کے اوپر اپنی نظر عنایت فرما تاکہ وہ ان آنکھوں سے انوارِخفی کا دیدار کرلیں۔

    ز لا کن محو ایں تصویر بے معنی ہستیم

    بہ لوح دل خدا را ثبت گرداں نقش الا را

    3. لا کے ذریعہ ہماری ہستی کی بے معنی تصویر کو محو کر دے، خدارا لوح دل پر نقش الا ثبت فرما۔

    تو شاہ نقشبندان جہانی ما گدایانیم

    توئی مشکل کشا از بند مشکل وارہاں ما را

    4. تو نقشبندیوں کی جہان کا بادشاہ ہے اور ہم گدا ہیں تو مشکل کشا ہے لہذا مشکلات کی قید سے ہم لوگوں کو رہائی عطا کر۔

    ز جام بادۂ الفقر و فخری جرعۂ خواہم

    برائے مصطفیٰؐ می ریز ایں کام دل ما را

    5. الفقر و فخری کے جام شراب سے ایک گھونٹ کا طلبگار ہوں مصطفی کے لئے ہمارے اس حلق میں چند قطرے انڈیل دے۔

    من از میم نگاہ مست او مستم برو ساقی

    بخاک افگن خم و پیمانہ و مینا و صحبا را

    6. میں اس کی نگاہ مست کے میم سے مست ہوں، اے ساقی جاؤ

    اس کے صہبا، خم، پیمانہ اور جام میں خاک ڈال دو۔

    بہ دل داری نہاں تو الفت شاہ بہاؤالدین

    کہ محسنؔ ؔاندرون کوزہ کردی بند دریا را

    7. تمہارا دل شاہ بہاؤ الدین کی محبت میں گرفتار ہے محسن نے کوزہ کے اندر ایک دریا کو سمو دیا ہے۔

    مأخذ :
    • کتاب : کلیات محسن
    • Author : شاہ محسن داناپوری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے