Sufinama

دلم بیاد رخ و چشم فتنہ زا خفتہ است

شاہ اکبرؔ داناپوری

دلم بیاد رخ و چشم فتنہ زا خفتہ است

شاہ اکبرؔ داناپوری

MORE BYشاہ اکبرؔ داناپوری

    دلم بیاد رخ و چشم فتنہ زا خفتہ است

    بزیر سایہ گل مورد بلا خفتہ است

    فتنہ بپا کرنے والی آنکھ اور چہرے کی یاد میں میری آنکھ سوئی ہے

    پھول کے سایہ میں مورد بلا استراحت پذیر ہے

    بسے بجستمت اے بادشاہ اسکندر

    کسے نداد نشانے کہ تو کجا خفتہ است

    اے سکندر اعظم میں نے تمہاری کافی جستجو کی

    کسی نے یہ نہیں بتایا کہ تو کہاں سو یا ہوا ہے

    چرا نہ انس کند جان من بگورستاں

    کہ صف بصف تہِ ایں خاک اولیا خفتہ است

    میری جان کو گورستان سے انس کیوں نہیں ہے؟

    اس خاک میں تو صف بہ صف اولیا کرام سوئے ہوئے ہیں

    در انتطار تو وا بود چشم من ہمہ شب

    سحر دمید مگر بخت نارسا خفتہ است

    تیرے انتظار میں میری آنکھ ساری رات کھلی رہی

    صبح تو ہوگئی مگر میرا بخت نارسا اب تک سویا ہے

    خضر چگونہ نہد پا بدشت پرہولم

    کہ لرزہ بر بدن افتادہ است و پا خفتہ است

    خضر، ہولناک جنگل میں قدم کیسے رکھیں گے؟

    کیوں کہ جسم لرزہ براندام ہے اور پاؤں سو رہا ہے

    بپائے غوث نہادم سرو بخواب شدم

    ببیں کہ طالع بیدار من کجا خفتہ است

    غوث کے قدموں میں سرڈال دیا اور میں سو گیا

    دیکھنا ہے کہ میرا طالع بیدار کہاں سویا ہے

    برو برائے خدا جستجو کن اے شب ہجر

    کہ خواب دیدۂ بے خواب من کجا خفتہ است

    اے شب ہجر جاؤ اور خدا کے واسطے ڈھونڈو

    کہ میری بے خوابی کا خواب کہاں سویا ہوا ہے؟

    ہلہ کہ آں دو سیہ چشم نیم باز بلا است

    بچشم او کہ بہر گوشہ صد بلا خفتہ است

    نیم باز کالی دو آنکھیں بلا شبہ ایک بلا ہیں

    اس کی آنکھ کے ہر گوشے میں سینکڑوں بلائیں سوئی ہوئی ہیں

    چو مرگ آمد و غیریت از میاں برخاست

    ببیں بہ پہلوئے بیگانہ آشنا خفتہ است

    جب موت آئی اور غیریت کا پردہ اٹھ گیا

    دیکھو کہ بیگانہ کے پہلو میں ایک آشنا سویا ہوا ہے

    مگر کہ بخت گرامی بلند و بیداراست

    شنیدہ ام بدرشاہِ اولیاء خفتہ است

    شاید میری قسمت بھی بیدارو بلند ہوجائے

    کیونکہ میں نے سنا ہے کہ وہ شاہ اولیا کے در پرسویا ہوا ہے

    بخاکِ قیس گذشتم نشستم و گفتم

    کجاست لیلیٰ و افسوس ایں کجا خفتہ است

    میں نے قیس کی قبر کے پاس بیٹھ کر کہا

    افسوس لیلا کہاں ہے اور یہ کہاں سو یا ہوا ہے

    بفرش اطلس و دیبا قدم منہ اکبر

    مگر ندیدہ ای برخاک مصطفا خفتہ است

    اے اکبرؔ اطلس و دیبا کے فرش پر قدم مت رکھ

    کیا تونے نہیں دیکھا کہ مصطفیٰ خاک پر سویا ہوا ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY