Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

حق نے احمد کو مزمل کی اڑھائی چادر

تصدق علی اسد

حق نے احمد کو مزمل کی اڑھائی چادر

تصدق علی اسد

MORE BYتصدق علی اسد

    حق نے احمد کو مزمل کی اڑھائی چادر

    عطر قربت سے ہے کیا خوب بسائی چادر

    تیری سکھیوں نے اسے تار نفس سے بن کر

    آج کس دھوم سے روضے پہ چڑھائی چادر

    کوئی رنگ چڑھتا نہیں رنگ شہادت کے سوا

    اپنے ہی خون میں آخر یہ رنگائی چادر

    یہ ردا احمد مرسل سے علی کو پہنچی

    عیب پوشی کے لئے خلق میں آئی چادر

    اب تو تو چشم عنایت سے اسے کر لے قبول

    نیستی کی تری درگاہ میں آئی چادر

    بے نشانی کے نہ کیوں اس پہ منقش ہوں نقوش

    نقد جاں دے کے اسدؔ ہم نے چھپائی چادر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے