Sufinama

نہ دہر میں نہ حرم میں جبیں جھکی ہوگی

فنا بلند شہری

نہ دہر میں نہ حرم میں جبیں جھکی ہوگی

فنا بلند شہری

MORE BYفنا بلند شہری

    نہ دہر میں نہ حرم میں جبیں جھکی ہوگی

    تمہارے در پہ ادا میری بندگی ہوگی

    نگاہ یار مری سمت پھر اٹھی ہوگی

    سنبھل سکوں گا نہ میں ایسی یہ بے خودی ہوگی

    نگاہ پھیر کے جا تو رہا ہے تو لیکن

    ترے بغیر بسر کیسے زندگی ہوگی

    کسی طرح بھی پئیں ہم غرض ہے پینے سے

    نہیں ہے جام تو آنکھوں سے مے کشی ہوگی

    تمام ہوش کی دنیا نثار ہے اس پر

    تری گلی میں جسے نیند آ گئی ہوگی

    گزر ہی جائے گا دنیا سے بے طلب ہو کر

    ترے خیال سے جس دل کو دوستی ہوگی

    جمال یار پہ یوں جاں نثار کرتا ہوں

    فنا کے بعد فناؔ گھر میں روشنی ہوگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY