Sufinama

ہمیشہ سوِز محبت ترا نہاں دیکھا

نذرؔ عظیم آبادی

ہمیشہ سوِز محبت ترا نہاں دیکھا

نذرؔ عظیم آبادی

MORE BYنذرؔ عظیم آبادی

    ہمیشہ سوِز محبت ترا نہاں دیکھا

    یہی وہ آگ ہے جس میں نہ کچھ دھواں دیکھا

    مزے وہ قید میں آئے قفس نصیبوں کو

    کہ بھول کر نہ کبھی سوئے آشیاں دیکھا

    کبھی بھی راس نہ آیا یہی تو رونا ہے

    بنا کے ہم نے کئی بار آشیاں دیکھا

    جو تجھ سے ملتے ہیں وہ دور ہیں تغیر سے

    بس ایک حال میں دیکھا جہاں جہاں دیکھا

    نہ قید خواب کی اس میں نہ قیدِ بیداری

    نثار ہوگئے اٹھ کر انہیں جہاں دیکھا

    نہ پوچھ حال کچھ اپنے مریضِ الفت کا

    بلا نصیب کو ہم نے تو نیمِ جاں دیکھا

    وطن کی یاد نے پہروں مجھے رُلا یا ہے

    لٹا ہوا سرِ منزل جو کارواں دیکھا

    جو تم کو رحم نہ آجائے تو مرا ذمہ

    ابھی کسی کو تڑپتے ہوئے کہاں دیکھا

    کچھ اُس سے پوچھے کوئی لطف دشتِ غربت کے

    بچھڑ کے پھر نہ کبھی جس نے کارواں دیکھا

    کہیں تو رات کو آتے نذرؔ میں نے دیکھا تھا

    کہو تو صاف بتادوں تمہیں کہاں دیکھا

    مأخذ :
    • کتاب : تذکرہ مسلم شعرائے بہارحصہ پنجم (Pg. 46)
    • Author : حکیم سید احمداللہ ندوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY