Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

اٹھ جا پھرے کس فکر میں آخر بسیرا گور ہے

پیر مجیب اللہ

اٹھ جا پھرے کس فکر میں آخر بسیرا گور ہے

پیر مجیب اللہ

MORE BYپیر مجیب اللہ

    اٹھ جا پھرے کس فکر میں آخر بسیرا گور ہے

    رہتا نہیں کیوں ذکر میں آخر بسیرا گور ہے

    یوں رہتے کیا پچھتاوے گا آخرکو تو مرجاوے گا

    اس گور میں پر لاوے گا آخر بسیرا گور ہے

    بشنو نصیحت اہل ہے، یہ زندگانی سہل ہے

    غافل جو رہتا جہل ہے آخر بسیرا گور ہے

    ساتھی جو تیرے چل بسے تجھ لوبھ کے پھندے پھنسے

    تجھ دیکھ کر مورکھ ہنسے آخر بسیرا گور ہے

    دھرتی کہے تو پاؤں ناں تجھ کو جو مجھ میں آوں ناں

    بھولا جو میں سمجھاؤں ناں آخر بسیرا گور ہے

    آیا جو تو کس چاؤ سیں جاوے گا تو کس بھاؤ سیں

    ماٹی پڑے دھر پاؤں سیں آخر بسیرا گور ہے

    آیا جو تو کس کارنے جاوے گا تو کس مارنے

    کیا آیا تھا جی ہارنے آخر بسیرا گور ہے

    اس نفس نےاندھا کیا سرتا قدم گندا کیا

    اپنا جولے پیدا کیا آخر بسیرا گور ہے

    جگ میں بسے تم آئے کر من کوں رکھا بھولا مگر

    کس نے کہیں سمجھا مگر آخر بسیرا گور ہے

    کیسی عمر ضائع کری تو نے جو کچھ ناقص رہی

    چلنے کی بریا آپڑی آخر بسیرا گور ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے