Sufinama

دریا دلی کہوں تری کیا ساقیا کہ بس

قمر جلالوی

دریا دلی کہوں تری کیا ساقیا کہ بس

قمر جلالوی

MORE BYقمر جلالوی

    دریا دلی کہوں تری کیا ساقیا کہ بس

    پیمانہ اپنے منہ سے خود بول اٹھا کہ بس

    ذکر شب الم پہ کلیجہ پکڑ لیا

    کچھ اور بھی سنوگے مرا ماجرا کہ بس

    اللہ جانے غیر سے کیا گفتگو ہوئی

    اتنا تو بھی آیا تھا سنتا ہوا کہ بس

    اور سنگ دل تھے وہ مگر آنسو نکل پڑے

    اس بے کسی سے میرا جنازہ اٹھا کہ بس

    اچھا تری گلی سے میں جاتا ہوں باغباں

    کچھ اور کہنے سننے کو باقی ہے یا کہ بس

    شب بھر ترے مریض کا عالم یہی رہا

    نبضوں پہ جس نے ہاتھ رکھا کہہ دیا کہ بس

    دن ہو کہ رات رونے سے مطلب ہمیں قمرؔ

    دل دے کے ان کو ایسا نتیجہ ملا کہ بس

    مأخذ :
    • کتاب : تذکرہ شعرائے اتر پردیش جلد گیارہویں (Pg. 219)
    • Author : عرفان عباسی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے