Sufinama

رہی یہ آرزو آخر کے دم تک

شاہ رکن الدین عشقؔ

رہی یہ آرزو آخر کے دم تک

شاہ رکن الدین عشقؔ

MORE BY شاہ رکن الدین عشقؔ

    رہی یہ آرزو آخر کے دم تک

    نہ پہنچا سر مرا تیرے قدم تک

    نشانہ اور ہی منظور ہے آج

    جو تیر اس کا نہیں آتا ہے ہم تک

    فلک کے پار ہوئی گو آہ حاصل

    نہ پہنچی گو بنا گوش صنم تک

    لکھوں کس طرح جو گزرے ہے دل پر

    نہیں آتا وہ مضموں قلم تک

    پریشاں بید مجنوں ہے نکلتا

    مگر پہنچا ہے شور دل عدم تک

    مآخذ:

    • Book : کلیات رکن الدین عشقؔ اور ان کی حیات و شاعری (Pg. 134)
    • Author : قریشہ حسین
    • مطبع : دی آزاد پریس، پٹنہ (1979)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY