Sufinama

بسکہ ہوں دل تنگ خوش آتا ہے صحرائے قفس

شاہ رکن الدین عشقؔ

بسکہ ہوں دل تنگ خوش آتا ہے صحرائے قفس

شاہ رکن الدین عشقؔ

MORE BY شاہ رکن الدین عشقؔ

    بسکہ ہوں دل تنگ خوش آتا ہے صحرائے قفس

    بلبل بے بال و پر رکھتی ہے سودائے قفس

    پالنا منظور ہے تو دست پرور کر اسے

    طائر وحشی مبادا دیکھ مر جائے قفس

    دیکھ کے صیاد کو محو تماشا ہو گئی

    بلبل تصویر سے مت پوچھ ایذائے قفس

    ہم دعا ہو ہم صفیرو تا اجابت ہو قریں

    رحم کھا کر باغ میں صیاد پھر لائے قفس

    ہم صفیر اس باغ کے سب قید تیرے ہو چکے

    عشق مجھ کو بھی دکھا دے تو تماشائے قفس

    گل کی خاطر قید میں رہتی ہے ورنہ باغباں

    نالۂ جاں سوز سے بلبل کے جل جائے قفس

    تیلیاں گنتے ہی گنتے عمر کے دم ہو چکے

    تخت سے اڑ کر نہ پہنچے عشق بالائے قفس

    مآخذ:

    • Book : کلیات رکن الدین عشقؔ اور ان کی حیات و شاعری (Pg. 112)
    • Author : قریشہ حسین
    • مطبع : دی آزاد پریس، پٹنہ (1979)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY