Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

جس کا دل جامِ فنا سے ہر گھڑی سرشار ہے

تصدق علی اسد

جس کا دل جامِ فنا سے ہر گھڑی سرشار ہے

تصدق علی اسد

MORE BYتصدق علی اسد

    جس کا دل جامِ فنا سے ہر گھڑی سرشار ہے

    اس کی صورت ہے کہاں وہ صورتِ دلدار ہے

    ایسی تنہائی ملی راہِ حقیقت میں ہمیں

    یاس و حسرت کے سوا کوئی نہیں غمخوار ہے

    ہم تو ہیں دیر و حرم میں ایک صورت دیکھتے

    تم میں اے شیخ و برہمن کس لئے تکرار ہے

    کیوں کیا ہے تونے میخانے کے دروازے کو بند

    آج کیا آیا نہیں ساقی کوئی میخوار ہے

    سر کو نہ کٹواتا گر رمز فنا کو جانتا

    کب کمالِ عشق میں منصور تو ہوشیار ہے

    جس کو آزادی ملی ہے عشق میں پھر وہ مدام

    کعبہ و بت خانہ میں پھرتا قلندر وار ہے

    قم باذنی شمس دیں کا حق ہے کہنا اے اسدؔ

    غین جب گم ہوگئی تب عین کا اظہار ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے