Sufinama

یہ تمنا ہے کہ اس طرح مسلماں ہوتا

فنا بلند شہری

یہ تمنا ہے کہ اس طرح مسلماں ہوتا

فنا بلند شہری

MORE BYفنا بلند شہری

    یہ تمنا ہے کہ اس طرح مسلماں ہوتا

    میں ترے حسن پہ سو جان سے قرباں ہوتا

    عالم جوش جنوں میں جو ادا ہوتی نماز

    سر مرا سر کہاں ہوتا در جاناں ہوتا

    کچھ تمنا ہے تو بس یہ ہے محبت میں مجھے

    میرے ہاتھوں میں مرے یار کا دامن ہوتا

    تو اگر اپنا بنا لیتا مجھے میرے صنم

    کیوں محبت مرا چاک گریباں ہوتا

    سب کرشمہ ہے فقط رنگ دوئی کا ورنہ

    مذہب پیر مغاں مشرب رنداں ہوتا

    نہ دکھاتے مجھے جلوہ مگر اتنا کرتے

    آپ کا غم مری تسکین کا ساماں ہوتا

    تھام کر میں ترے دامن کا فناؔ ہو جاتا

    کاش اس طرح مکمل مرا ایماں ہوتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY