Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

جو ساری خلق ہے پاتی عطا وہ تیری ہے

عبدالطیف شوق

جو ساری خلق ہے پاتی عطا وہ تیری ہے

عبدالطیف شوق

MORE BYعبدالطیف شوق

    جو ساری خلق ہے پاتی عطا وہ تیری ہے

    جو ساری خلق ہے کرتی ثنا وہ تیری ہے

    میں اک مریض ہوں یا رب مجھے مسیحا کیا

    مرا علاج ہے جس میں دوا وہ تیری ہے

    اندھیرے تو نہ بناتا تو کیوں پتا چلتا

    کہ کائنات میں پھیلی ضیا وہ تیری ہے

    پہاڑ جھرنے تیرے اور خشک مٹی پر

    ہری ہری جو بچھی ہے ردا وہ تیری ہے

    جو اڑ رہے فلک پر سحاب تیرے ہیں

    اڑا رہی ہے انہیں جو ہوا وہ تیری ہے

    خطا معاف ہمیں لفظ دے نہیں پائے

    لکھی جو نوک قلم سے ثنا وہ تیری ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے