Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

جو سایہ ترا اڑ گیا کملی والے

اکبر وارثی میرٹھی

جو سایہ ترا اڑ گیا کملی والے

اکبر وارثی میرٹھی

MORE BYاکبر وارثی میرٹھی

    جو سایہ ترا اڑ گیا کملی والے

    وہ حوروں کی زلفیں بنا کملی والے

    جھکی کالی کالی گھٹا کملی والے

    ہمیں عشق گیسو بڑھا کملی والے

    ترے چاند سے رخ پہ بکھری ہیں زلفیں

    کہ سورج پہ کالی گھٹا کملی والے

    وہ محبوبیاں جو خدا کو خوش آئیں

    دوئی کی طرح اڑ گیا کملی والے

    ترے ساتھ سایہ نہ بھایا خدا کو

    دوئی کی طرح اڑ گیا کملی والے

    گرجتے ہیں بادل چمکتی ہے بجلی

    تو کملی میں اپنی چھپا کملی والے

    خبر لے ذرا اکبرؔ غمزدہ کی

    ترے ہجر میں مر مٹا کملی والے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے