Sufinama

ہے نورِ نگاہِ شہ یحییٰ شرف الدین

شاہ مراد اللہ منیری

ہے نورِ نگاہِ شہ یحییٰ شرف الدین

شاہ مراد اللہ منیری

MORE BYشاہ مراد اللہ منیری

    ہے نورِ نگاہِ شہ یحییٰ شرف الدین

    ملجا مرا ماویٰ مرا آقا شرف الدین

    اک چشمِ کرم مجھ پہ خدارا شرف الدین

    میں جاؤں کدھر ہوکے تمہارا شرف الدین

    اِس نام کی عزت کو کوئی مجھ سے تو پوچھے

    واللہ عجب نام ہے پیارا شرف الدین

    یہ نام ملائک کے بھی تو وردِ زباں ہے

    میں ہی نہیں کہتا ہوں فقط یا شرف الدین

    گردن میں مری طوق غلامی ہے ازل سے

    میں بندہ ہوں میں بندہ تمہارا شرف الدین

    فکر غم کونین سے آزاد ہوا میں

    رشتہ ترے دامن سے جو باندھا شرف الدین

    اک جُرعۂ نگاہوں سے پلا دیجئے مجھ کو

    مدت سے ہوں اس جام کا پیاسا شرف الدین

    گرتوں کو اٹھایا ہے بہت آپ نے آقا

    دے دیجئے مجھ کو بھی سہارا شرف الدین

    دیکھا نہیں جاتے ہوئے محروم کسی کو

    در پر ترے جو عجز سے آیا شرف الدین

    ہنگام اجل سامنے ہو مرقدِ انور

    اور وردِ زباں پر مری یا شرف الدین

    ملتا ہے سکوں دل کو مرادؔ اپنے اسی سے

    لے لیتا ہوں جو نام دل آرا شرف الدین

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY