Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

سجودے بہ آں مست محشر خرامے

میکش اکبرآبادی

سجودے بہ آں مست محشر خرامے

میکش اکبرآبادی

MORE BYمیکش اکبرآبادی

    سجودے بہ آں مست محشر خرامے

    ز مے کش ز رندے ز برباد کامے

    اس مست قیامت اٹہانے والے محبوب کی چال کو سجدہ، شراب پینے والے رند اور برباد انسان کا سجدہ۔

    خرابم از چشم مے گوں خرابم

    بہ ساغر بہ مینا ببادہ بہ جامے

    ایسا لگتا ہے کہ میں ان نگاہوں سے ہی خراب ہوا ہوں، نہ کہ ساغر و مینا یا شراب و جام سے۔

    غرض آفت جان محزون ما را

    بہ قہرے بہ مہرے سکوتے کلامے

    غرض کہ وہ ہماری غمزدہ جان کو غصہ، خاموشی اور سکوت سے اداس کرتا ہے۔

    نمازم ہمیں بس کہ دارم خیالے

    سجوے قیودے رقوعے قیامے

    ہماری نماز یہی ہے کہ مجہے ہر وقت سجدہ، قعود و رکوع اور قیام کا خیال رہتا ہے۔

    جنونم بہ یفزود امروز میکش

    تبسم نگاہے تموج خرامے

    اے میکش! آج ہمارے جنون کو ایک مسکراتی ہوئی نظر اور لہراتی ہوئی چال نے بڑھا دیا ہے۔

    مأخذ :
    • کتاب : نغمات سماع (Pg. 375)
    • مطبع : نور الحسن مودودی صابری (1935)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے