Sufinama

آب میں سایہ فگن گر رخ دلبر ہوتا

شاہ نصیر

آب میں سایہ فگن گر رخ دلبر ہوتا

شاہ نصیر

MORE BYشاہ نصیر

    آب میں سایہ فگن گر رخ دلبر ہوتا

    شاخ ہر موج سے پیدا گل احمر ہوتا

    مجھ کو دیکھ آئینہ وحشی جو نہ دلبر ہوتا

    صورت حلقۂ زنجیر نہ جوہر ہوتا

    حیف دیکھی نہ چیں اس کی مسیحا ورنہ

    چرخ چارم پہ تیری پاس میرا گہر ہوتا

    میں اگر کہنے سے اس بت کی پہنتا زنار

    دل میں جوں رشتۂ تسبیح میرا گہر ہوتا

    صاف ہم قطع نظر عکس دوئی سے کرتے

    وصل اس آئینہ رو کا جو مستر ہوتا

    مأخذ :
    • کتاب : انتخاب کلیات شاہ نصیرؔ مرتب حافظ محمد اکبر (Pg. 9)
    • Author : شاہ نصیرؔ
    • مطبع : اعلیٰ پریس میرٹھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY