Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

آج اک اک بادہ کش مسرور مے خانے میں ہے

پیر نصیرالدین نصیرؔ

آج اک اک بادہ کش مسرور مے خانے میں ہے

پیر نصیرالدین نصیرؔ

MORE BYپیر نصیرالدین نصیرؔ

    آج اک اک بادہ کش مسرور مے خانے میں ہے

    تازہ تازہ اس کے اس کے سب کے پیمانے میں ہے

    شیخ جل اٹھے گا تو وہ شعلہ مے خانے میں ہے

    مے نہیں یہ اک دہکتی آگ پیمانے میں ہے

    اپنا دیوانہ بنا لیتا ہے ساری خلق کو

    اک ادائے خاص ایسی اس کے دیوانے میں ہے

    دیر بوتل کے اٹھانے میں لگے گی کچھ نہ کچھ

    مجھ کو اتنی ہی بہت ہے جتنی پیمانے میں ہے

    میکدے میں آنے والو مے کدہ مت چھوڑنا

    مرنے جینے کا مزا کچھ ہے تو مے خانے میں ہے

    پی رہا ہوں جی رہا ہوں شاد ہوں مسرور ہوں

    زندگی ہی زندگی لبریز پیمانے میں ہے

    دل کی بے کیفی کا یہ عالم ہوا بعد جنوں

    لطف جینے کا نہ گلشن میں نہ ویرانے میں ہے

    دھیان ہے آہٹ پہ حسرت دل میں ہے آنکھوں میں دم

    ہم چلے دنیا سے ان کو دیر اگر آنے میں ہے

    جاگ اٹھی قسمت مقدر جگمگا اٹھا نصیرؔ

    جلوہ فرما آج کوئی میرے کاشانے میں ہے

    مأخذ :
    • کتاب : کلیات نصیرؔ گیلانی (Pg. 677)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے