Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

میرے خون آرزو کو وہ سمجھ رہے ہیں پانی

عاقل ریواڑوی

میرے خون آرزو کو وہ سمجھ رہے ہیں پانی

عاقل ریواڑوی

MORE BYعاقل ریواڑوی

    میرے خون آرزو کو وہ سمجھ رہے ہیں پانی

    انہیں ہوش تک نہ آیا مری لٹ گئی جوانی

    میں نے پہلے ہی کہا تھا تری ہر ادا ہے فانی

    دل بد نصیب تو نے مری بات ہی نہ مانی

    مجھے آج ہی پلا دے نہ توکل پہ ٹال ساقی

    کہ چھلک نہ جائے کل تک مرا جام زندگانی

    نہ اڑا تو ٹھوکروں سے مری خاک قبر ظالم

    یہی آخری بچی ہے ترے ہجر کی نشانی

    مرے شعر سن رہے ہیں یہ مہہ‌ و نجوم عاقلؔ

    مجھے لے اڑی ہے میری یہی طرز خوش بیانی

    مأخذ :
    • کتاب : صبحِ باراں (Pg. 37)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے