Sufinama

حسیں ملتے ہیں درد عشق کا حامل نہیں ملتا

عبدالمنان طرزی

حسیں ملتے ہیں درد عشق کا حامل نہیں ملتا

عبدالمنان طرزی

MORE BYعبدالمنان طرزی

    حسیں ملتے ہیں درد عشق کا حامل نہیں ملتا

    مزاج وقت کیا بدلا کہ اہل دل نہیں ملتا

    زبان خلق وقف شکوۂ نا التفاتی ہے

    کہ بسمل تو ہزاروں ہیں کوئی قاتل نہیں ملتا

    دھلی جاتی ہے اشک شمع سے اب خاک پروانہ

    غلط ہے یہ کہ جل مرنے کا کچھ حاصل نہیں ملتا

    ٹھہر لے دل تو طوفاں کی کہو حالت ابھی یہ ہے

    کہ ساحل پر پہنچ کر بھی مجھے ساحل نہیں ملتا

    تمہاری جستجو میں سب اسیر آرزو نکلے

    مگر طرزیؔ کے ایسا تو ز خود غافل نہیں ملتا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے