Sufinama

ترے جلووں کی نیرنگی سے چشم شوق حیراں ہے

افقر وارثی

ترے جلووں کی نیرنگی سے چشم شوق حیراں ہے

افقر وارثی

MORE BY افقر وارثی

    ترے جلووں کی نیرنگی سے چشم شوق حیراں ہے

    کہیں دریا ہے کوزہ میں کہیں ذرہ بیاباں ہے

    خدا رکھے عجب کیف بہار کوئے جاناں ہے

    کہ دل ہے جلوہ ساماں تو نظر جنت بہ داماں ہے

    بدل لے مرنے والے ہم سے مرگ ناگہاں اپنی

    تجھے جینے کی حسرت تھی ہمیں مرنے کا ارماں ہے

    اب اس منزل پہ پہنچا ہے کسی کا بے خود الفت

    جہاں پر زندگی و موت کا احساس یکساں ہے

    مری ہستی دم نظارہ حائل ہے نگاہوں میں

    مری ہستی کا پردہ خود حجاب روئے جاناں ہے

    نہ شرط زندگی کوئی نہ تعیین اجل کوئی

    ابھی زندہ ابھی مردہ عجب ہستیٔ انساں ہے

    عجب الجھن میں ڈالا تو نے اے دست جنوں مجھ کو

    وہ کہتے ہیں یہ دامن ہے میں کہتا ہوں گریباں ہے

    جناں کو میں برا کہتا نہیں لیکن یہ کہتا ہوں

    جناں واعظ جناں ہے کوئے جاناں کوئے جاناں ہے

    نظر رکھ فضل خالق پر نہ گھبرا ڈوبنے والے

    اسی دریا میں ساحل ہے اسی دریا میں طوفاں ہے

    ہوئی مدت گری تھی چرخ سے بجلی گلستاں میں

    مری نظروں میں لیکن آج تک جلتا گلستاں ہے

    سفینہ دل کا کیا ڈوبا کہ دنیا گم ہوئی افقرؔ

    نہ کشتی ہے نہ دریا ہے نہ ساحل ہے نہ طوفاں ہے

    مآخذ:

    • کتاب : نظرگاہ (Pg. 120)
    • Author : افقرؔ وارثی
    • مطبع : صدیق بک ڈپو، لکھنؤ (1961)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY