Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

آنکھوں میں مروت تری اے یار کہاں ہے

عبدالرحمٰن احسان دہلوی

آنکھوں میں مروت تری اے یار کہاں ہے

عبدالرحمٰن احسان دہلوی

MORE BYعبدالرحمٰن احسان دہلوی

    آنکھوں میں مروت تری اے یار کہاں ہے

    پوچھا نہ کبھو مجھ کو وہ بیمار کہاں ہے

    نو خط تو ہزاروں ہیں گلستان جہاں میں

    ہے صاف تو یوں تجھ سا نمودار کہاں ہے

    آرام مجھے سایۂ طوبیٰ میں نہیں ہے

    بتلاؤ کہ وہ سایۂ دیوار کہاں ہے

    لاؤ تو لہو آج پیوں دختر رز کا

    اے محتسبو دیکھو وہ مردار کہاں ہے

    فرقت میں اس ابرو کی گلا کاٹوں گا اپنا

    میاں دیجو اسے دم مری تلوار کہاں ہے

    جن سے کہ ہو مربوط وہی تم کو ہے میمون

    انسان کی صحبت تمہیں درکار کہاں ہے

    دیکھوں جو تجھے خواب میں میں اے مہ کنعاں

    ایسا تو مرا طالع بیدار کہاں ہے

    سنتے ہی اس آواز کی کچھ ہو گئی وحشت

    دیکھو تو وہ زنجیر کی جھنکار کہاں ہے

    دن چھینے وو جب دیکھیو غارت گری اس کی

    تب سوچیو خورشید کی دستار کہاں ہے

    اس دن کے ہوں صدقے کہ تو کھینچے ہوے تلوار

    یہ پوچھتا آوے وہ گنہ گار کہاں ہے

    ہنستے تو ہو تم مجھ پہ ولیکن کوئی دن کو

    روؤگے کہ وہ میرا گرفتار کہاں ہے

    اے غم مجھے یاں اہل تعیش نے ہے گھیرا

    اس بھیڑ میں تو اے مرے غم خوار کہاں ہے

    جب تک کہ وہ جھانکے تھا ادھر مہر سے ہم تو

    واقف ہی نہ تھے مہر پر انوار کہاں ہے

    اس مہ کے سرکتے ہی یہ اندھیر ہے احساںؔ

    معلوم نہیں رخنۂ دیوار کہاں ہے

    مأخذ :
    • کتاب : کلیات احسان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے