Sufinama

چاندنی رات میں کھلے چہرے

واصف علی واصفؔ

چاندنی رات میں کھلے چہرے

واصف علی واصفؔ

MORE BYواصف علی واصفؔ

    چاندنی رات میں کھلے چہرے

    صبح ہوتے ہی چھپ گئے چہرے

    میں نگاہوں کو کس طرح بدلوں

    آپ نے تو بدل لیے چہرے

    غور سے دیکھ آبگینوں کو

    کل کہاں ہوں گے آج کے چہرے

    کھا رہے ہیں درخت کا سایہ

    ٹہنیوں سے لگے ہوئے چہرے

    اس کا چہرہ کب اس کا اپنا تھا

    جس کے چہرے پر مر مٹے چہرے

    زندگی میں کبھی نہیں ملتے

    کاغذوں پر سجے ہوئے چہرے

    آ گئے کھل کے سامنے واصفؔ

    آستیں میں چھپے ہوئے چہرے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY