Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

داغ وہ داغ ہے دل میں جو نمایاں نہ ہوا

فوق آروی

داغ وہ داغ ہے دل میں جو نمایاں نہ ہوا

فوق آروی

MORE BYفوق آروی

    داغ وہ داغ ہے دل میں جو نمایاں نہ ہوا

    درد وہ درد ہے جس درد کا درماں نہ ہوا

    نہ ہوا وصل کا تقدیر میں ساماں نہ ہوا

    گھر تو گھر وہ تو کبھی دل میں بھی مہماں نہ ہوا

    ہجر کی دن میں کمی وصل کے شب کی نہ ہوئی

    وصل کی رات میں طول شبِ ہجراں نہ ہوا

    دامن غیر کو وہ کھینچ کے یوں چاک گریں

    رشک آتا ہے یہ میرا ہے گریباں نہ ہوا

    خط کی بدلی میری تصویر ہے لے جا قاصد

    حال وہ کیا ہے جو صورت سے نمایاں نہ ہوا

    فوقؔ میں درد کا قائل ہو رہا پہلو میں

    اور کوئی بھی شریکے شبِ ہجراں نہ ہوا

    کیا کہوں حال میں اس دم کے پشمانی کا

    اس بزم میں کوئی میرا پرسان نہ ہوا

    مأخذ :
    • کتاب : Diwan-e-Fauq (Pg. 7)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے