Sufinama

عشق ہرچند مری جان سدا کھاتا ہے

خواجہ میر درد

عشق ہرچند مری جان سدا کھاتا ہے

خواجہ میر درد

MORE BYخواجہ میر درد

    عشق ہرچند مری جان سدا کھاتا ہے

    پر یہ لذت تو وہ ہے جی ہی جسے پاتا ہے

    آہ کب تک میں بکوں تیری بلا سنتی ہے

    باتیں لوگوں کی جو کچھ دل مجھے سنواتا ہے

    ہم نشیں پوچھ نہ اس شوخ کی خوبی مجھ سے

    کیا کہوں تجھ سے غرض جی کو مرے بھاتا ہے

    بات کچھ دل کی ہمارے تو نہ سلجھی ہم سے

    آپی خوش ہووے ہے پھر آپ ہی گھبراتا ہے

    جی کڑا کر کے ترے کوچے سے جب جاتا ہوں

    دل دشمن یہ مجھے گھیر کے پھر لاتا ہے

    راہ پینڈے کبھو اس شوخ کے تئیں ہم سے بھی

    دید وا دید تو ہوتی ہے جو مل جاتا ہے

    دردؔ کی قدر مرے یار سمجھنا واللہ

    ایسا آزاد ترے دام میں یوں آتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY