Sufinama

جلوہ جو ترے رخ کا احساس میں ڈھل جائے

فنا بلند شہری

جلوہ جو ترے رخ کا احساس میں ڈھل جائے

فنا بلند شہری

MORE BYفنا بلند شہری

    جلوہ جو ترے رخ کا احساس میں ڈھل جائے

    اس عالم ہستی کا عالم ہی بدل جائے

    ان مست نگاہوں کا اک دور جو چل جائے

    ہم درد کے ماروں کی تقدیر بدل جائے

    مصروف عبادت کا یوں ختم ہو افسانہ

    سر ہو تری چوکھٹ پہ دم میرا نکل جائے

    تو لاکھ بچا دامن در سے نہ اٹھوں گا میں

    ان میں سے نہیں ہوں میں ٹالے سے جو ٹل جائے

    اے جان کرم مجھ پر ایک چشم کرم کر دے

    ایسا نہ ہو دیوانہ قدموں پہ مچل جائے

    حسرت بھری آنکھوں میں اک پل کے لئے آ جا

    دیکھے جو تیری صورت دیوانہ بہل جائے

    تو آگ محبت کی بھر دے مری نس نس میں

    ہر ذرہ مرے دل کا اس آگ میں جل جائے

    بجلی ترے جلووں کی گر جائے کبھی مجھ پر

    اے جان مری ہستی اس آگ میں جل جائے

    اے چارہ گرو دیکھو بیمار محبت ہوں

    تدبیر کرو ایسی دل جس سے بہل جائے

    تو جذب محبت میں کر لے وہ اثر پیدا

    جس سمت نظر اٹھے اک تیر سا چل جائے

    پامال رہ الفت ہو جاؤں محبت میں

    وہ شوخ اگر مجھ کو قدموں سے مسل جائے

    تقدیر کرے احساں یوں بعد فناؔ مجھ پر

    خاک در جانانہ منہ پر مرے مل جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY