Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

چلا ہے اول راحت طلب کیا شادماں ہو کر

خواجہ وزیر لکھنوی

چلا ہے اول راحت طلب کیا شادماں ہو کر

خواجہ وزیر لکھنوی

MORE BYخواجہ وزیر لکھنوی

    چلا ہے اول راحت طلب کیا شادماں ہو کر

    زمین کوئے جاناں رنج دے گی آسماں ہو کر

    اسی خاطر تو قتل عاشقاں سے منع کرتے تھے

    اکیلے پھر رہے ہو یوسف بے کارواں ہو کر

    جواب نامہ کیا لایا تن بے جاں میں جان آئی

    گیا یاں سے کبوتر واں سے آیا مرغ جاں ہو کر

    کیا غیروں کو قتل اس نے موئے ہم رشک کے مارے

    اجل بھی دوستو آئی نصیب دشمناں ہو کر

    پھرا صد چاک ہو کر کوچۂ کاکل سے دل اپنا

    عزیزو یوسف گم گشتہ آیا کارواں ہو کر

    نہانے میں جو لہراتی ہے زلف یار دریا میں

    تڑپنے لگتی ہیں پانی پہ موجیں مچھلیاں ہو کر

    ادا سے جھک کے ملتے ہو نگہ سے قتل کرتے ہو

    ستم ایجاد ہو ناوک لگاتے ہو کماں ہو کر

    وزیرؔ اس کا ہوں میں شاگرد جس کو کہتے ہیں منصف

    لیا ملک معانی بادشاہ شاعراں ہو کر

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے