Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

نالاں فراق دل میں ہے ماتم سرائے دل

خواجہ وزیر لکھنوی

نالاں فراق دل میں ہے ماتم سرائے دل

خواجہ وزیر لکھنوی

MORE BYخواجہ وزیر لکھنوی

    نالاں فراق دل میں ہے ماتم سرائے دل

    سینے سے آ رہی ہے صدا ہائے ہائے دل

    حاضر ہے لیجیے یہ اگر کام آئے دل

    کچھ اور پاس ہم نہیں رکھتے سوائے دل

    آتی ہے ان کے کوچۂ گیسو سے یہ صدا

    آؤ مسافرو کہ یہاں ہے سرائے دل

    بو ہو کے گل میں کیا دل بلبل سما گیا

    توڑا کسی نے پھول تو آئی صدائے دل

    آنکھیں لہو بہائیں جو ساغر سے مے گرے

    شیشہ جو گر پڑے تو مرا ٹوٹ جائے دل

    راحت گئی اگر تو کیا رنج نے گزر

    خالی رہے وزیرؔ نہ مہماں سرائے دل

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے