Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

تماشا دیکھنا ہے وہ اثر اس چشمِ جادو میں

خواجہ وزیر لکھنوی

تماشا دیکھنا ہے وہ اثر اس چشمِ جادو میں

خواجہ وزیر لکھنوی

MORE BYخواجہ وزیر لکھنوی

    تماشا دیکھنا ہے وہ اثر اس چشمِ جادو میں

    اشارے سے کرے گی رقص پتلی چشمِ آہو میں

    میں وہ ہوں دشتِ پیما ذکر میرا گر کرے کوئی

    پڑیں کانٹے زباں میں آ بلے پڑ جائیں تالو میں

    صفائی جس قدر اس میں ہے اتنے پیچ ہیں اس میں

    پھسل کر تیرے چہرے سے نگہ پھنستی ہے گیسو میں

    جبیں والفجر ہے واللیل گیسوئے معنبر ہے

    خطِ رخ سورۂ یوسف ہے ان کے مصحفِ رو میں

    جو ہیں خوش چشم انہیں کیا احتیاج زیب و زینت ہے

    کوئی سرمہ لگاتا ہے بھلا کب چشمِ آہو میں

    دکھاؤں دیدۂ حیراں کا اس خود بیں کو آئینہ

    دل صد چاک سے شانہ کروں میں اس کے گیسو میں

    وزیرؔ آغوش یاں فرقت میں بھی خالی نہیں رہتی

    انہیں ہے یار اگر تو درد ہے مدت سے پہلو میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے