Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

جسم سے نکلی تو پہنچی کعبۂ مقصود تک

خواجہ وزیر لکھنوی

جسم سے نکلی تو پہنچی کعبۂ مقصود تک

خواجہ وزیر لکھنوی

MORE BYخواجہ وزیر لکھنوی

    جسم سے نکلی تو پہنچی کعبۂ مقصود تک

    بے لباسی بن گئی ہے جامۂ احرام روح

    دو ہی دن میں نوجوانی رنگ پیری لائے گی

    اے جہان جسم اک دن صبح ہوگی شام روح

    سوز غم سے آب و خاک و باد ہیں آتش مزاج

    چار عنصر کا بنا چومکھ چراغ خام روح

    کوئی تو جان جہاں مہماں سرائے دل میں ہے

    دم بدم پہنچاتے ہیں پیک نفس پیغام روح

    خوب رویوں کو ضرر پہنچا سکے کیا انقلاب

    حور ہو جائے جو لکھے کوئی الٹا نام روح

    لو خدا حافظ کہ آ پہنچا ہے عشق کفر زا

    بھاگ جائے دل بغل میں داب کر اسلام روح

    تھی میسر عرش یا اب ہے اسیر مشت خاک

    واہ کیا آغاز تھا اور کیا ہوا انجام روح

    جان کی کس کو خبر دل ہی نہیں ہے اے وزیرؔ

    ہو گیا گم وہ نگیں جس پر کھدا تھا نام روح

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے