Sufinama

لگا ہے دل مرا اوس سوں کہ جو مرلی مراری ہے

سہجو بائی

لگا ہے دل مرا اوس سوں کہ جو مرلی مراری ہے

سہجو بائی

MORE BYسہجو بائی

    لگا ہے دل مرا اوس سوں کہ جو مرلی مراری ہے

    سلونا سانولا گردھر گرڑ جس کی سواری ہے

    بجا مرلی نے مرلیؔ دھر کیا من باؤلا میرا

    او گوبند و جنااردن کی دھن مرلی کی پیاری ہے

    چتربھج نام ہے اس کا کہ جس کو واسدیو کہتے

    چھبیلی چھب او دامودر کی تربھنگی پیاری ہے

    سہس سرخس کوں گوپن ہور رہے سب پاس سب سوں دور

    ابھوگی بھوگ لے سب کا اگوچر برمچاری ہے

    سیہ رنگ پر سیہ کاکل کھلے جگدیش مادھو کے

    پریشاں کیوں نہ ہو شانہ کہ رنگ تارتاری ہے

    مراری کی مروت ہور دامودر کے درشن کا

    جو مے چاکھا سو ست گر سیں اوہی اب لگ خماری ہے

    سنا اپدیش گرمکھ سیں مکند ہے نام ہرجی کا

    تو اس کا بولنا استت زہے خدمت گزاری ہے

    لے جا بن میں گئو سارے او بندرابن کے کمل پوش

    اوسی گوپال مرلیؔ دھر سوں دھن مرلی کی ساری ہے

    نہ ہندو نا مسلماں کے اس پڑا قید میں ہرگز

    ترابؔ مبتلا کے تئیں دیا جو بے قراری ہے

    مأخذ :
    • کتاب : دیوان تراب (Pg. 449)
    • Author : شاہ تراب علی دکنی
    • مطبع : انجمن ترقی اردو (پاکستان) (1983)
    • اشاعت : First

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY