Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

محفل عشق میں جو یار اٹھے اور بیٹھے

عبدالرحمٰن احسان دہلوی

محفل عشق میں جو یار اٹھے اور بیٹھے

عبدالرحمٰن احسان دہلوی

MORE BYعبدالرحمٰن احسان دہلوی

    محفل عشق میں جو یار اٹھے اور بیٹھے

    ہے وہ ملکہ کہ سبکبار اٹھے اور بیٹھے

    رقص میں جب کہ وہ طرار اٹھے اور بیٹھے

    بے قراری سے یہ بیمار اٹھے اور بیٹھے

    کثرت خلق وہ محفل میں ہے تیری اک شخص

    نہیں ممکن ہے کہ یکبار اٹھے اور بیٹھے

    سر اٹھانے کی بھی فرصت نہیں دیتا ہے ہمیں

    چو حباب سر جو یار اٹھے اور بیٹھے

    خوف بدنامی سے تجھ پاس نہ آئے ورنہ

    ہم کئی بار سن اے یار اٹھے اور بیٹھے

    درد کیوں بیٹھے بٹھائے ترے سر میں اٹھا

    کہ قلق سے ترے سو بار اٹھے اور بیٹھے

    تیری دیوار تو کیا گنبد دوار بھی یار

    چاہئے آہ شرربار اٹھے اور بیٹھے

    آپ کی مجلس عالی میں علی الرغم رقیب

    بہ اجازت یہ گنہ گار اٹھے اور بیٹھے

    آپ سے اب تو اس احقر کو سروکار نہیں

    جس جگہ چاہئے سرکار اٹھے اور بیٹھے

    حضرت دل سپر داغ جنوں کو لے کر

    یوں بر عشق جگر خوار اٹھے اور بیٹھے

    چوں دلیرانہ کوئی منہ پہ سپر کو لے کر

    شیر خونخوار کو للکار اٹھے اور بیٹھے

    کفش دوز ان کے جب اپنے ہی برابر بیٹھیں

    ایسی مجلس میں تو پیزار اٹھے اور بیٹھے

    زاہد آیا تو گوارا نہیں رندوں ہم کو

    اپنی اس بزم میں مکار اٹھے اور بیٹھے

    دونوں کانوں کو پکڑ کر یہی ہے اس کی سزا

    کہہ دو سو بار یہ عیار اٹھے اور بیٹھے

    بیٹھتے اٹھتے اسی طرح کے لکھ اور غزل

    جس میں احساںؔ ہو نہ پیکار اٹھے اور بیٹھے

    مأخذ :
    • کتاب : کلیات احسان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے