Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

حجاب خاص کے پردے اٹھے ہیں کیف و مستی میں

مضطر خیرآبادی

حجاب خاص کے پردے اٹھے ہیں کیف و مستی میں

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    حجاب خاص کے پردے اٹھے ہیں کیف و مستی میں

    نہ جانے کس کی ہستی دیکھتا ہوں اپنی ہستی میں

    نہ بہکا آج تک میں نشۂ الفت کی مستی میں

    بتوں کو بھی اگر پوجا تو پوجا حق پرستی میں

    نہ سوئے چادر گل پر کبھی دنیا کی بستی میں

    سدا کانٹے ہی چنتے کٹ گئی گلزار ہستی میں

    لگی اس شعلۂ رخسار کی باقی رہی یونہی

    تو سن لینا کہ اک دن مر گیا آتش پرستی میں

    مری تربت پہ خود ساقی نے آ کر یہ دعا مانگی

    خدا بخشے بہت اچھی گزاری مے پرستی میں

    مرے قاتل کی جلدی نے مجھے ناکام ہی رکھا

    تمنا دیکھنے کی بھی نہ نکلی تیز دستی میں

    برنگ کاسۂ تقدیر گردش ہی میں دن گزرے

    پیالہ بن کے میں نے عمر کاٹی مے پرستی میں

    نرالی شان سے نکلا ہوں تیری جستجو کرنے

    محبت رہنمائی میں ہے وحشت سر پرستی میں

    تلاش بت میں مجھ کو دیکھ کر جنت میں سب بولے

    یہ کافر کیوں چلا آیا مسلمانوں کی بستی میں

    بیابان غریبی میں بسر کرتا ہوں مدت سے

    وطن جس دن سے چھوڑا جی نہیں لگتا ہے بستی میں

    مأخذ :
    • کتاب : خرمن حصہ - ۲ (Pg. 172)
    • Author : مضطر خیرآبادی
    • مطبع : جاوید اختر (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے