Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

کس شان سے اٹھا ہے ساقی ترا مستانہ

مضطر خیرآبادی

کس شان سے اٹھا ہے ساقی ترا مستانہ

مضطر خیرآبادی

MORE BYمضطر خیرآبادی

    کس شان سے اٹھا ہے ساقی ترا مستانہ

    حوریں لیے آتی ہیں پیمانے پہ پیمانہ

    ماتھا میں رگڑتا ہوں قسمت مری چمکا دے

    تجھ میں تو شرارے ہیں سنگ در جانانہ

    نیرنگیٔ وحدت سے مجنوں کا یہ نقشہ ہے

    صورت تو ہے لیلیٰ کی اور بھیس ہے مردانہ

    جس دن سے دوئی میں نے کھو دی ہے اسی دن سے

    خود نور حقیقت ہوں خود جلوۂ جانانہ

    دل میرا مع حسرت مدفن میں بھی ساتھ آیا

    مدفن نہ کہو اس کو یہ ہے مرا غم خانہ

    لے خلوت مدفن میں مضطرؔ ترا آ پہنچا

    اب چھوڑ دے اے وحدت انداز حجابانہ

    مأخذ :
    • کتاب : خرمن حصہ - ۲ (Pg. 208)
    • Author : مضطر خیرآبادی
    • مطبع : جاوید اختر (2015)
    • اشاعت : 2015

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے