Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

نہیں سنتا نہیں آتا نہیں بس میرا چلتا ہے

عبدالرحمٰن احسان دہلوی

نہیں سنتا نہیں آتا نہیں بس میرا چلتا ہے

عبدالرحمٰن احسان دہلوی

MORE BYعبدالرحمٰن احسان دہلوی

    نہیں سنتا نہیں آتا نہیں بس میرا چلتا ہے

    نکل اے جان تو ہی وہ نہیں گھر سے نکلتا ہے

    جلا ہوں آتش فرقت سے میں اے شعلہ رو یاں تک

    چراغ خانہ مجھ کو دیکھ کر ہر شام جلتا ہے

    نہیں یہ اشک و لخت دل تری الفت کی دولت سے

    مرا یہ دیدہ ہر دم لعل اور گوہر اگلتا ہے

    کسی کا ساتھ سونا یاد آتا ہے تو روتا ہوں

    مرے اشکوں کی شدت سے سدا گل تکیہ گلتا ہے

    ملاتا ہوں اگر آنکھیں تو وہ دل کو چراتا ہے

    جو میں دل کو طلب کرتا ہوں وہ آنکھیں بدلتا ہے

    مرے پہلو و سینہ میں بتوں کے رہ گئے خنجر

    خدا کا فضل جس پر ہو تو وہ اس طرح بہلتا ہے

    صدا ہی میری قسمت جوں صدائے حلقۂ در ہے

    اگر میں گھر میں جاتا ہوں تو وہ باہر نکلتا ہے

    وہ بحر حسن شاید باغ میں آوے گا اے احساںؔ

    کہ فوارہ خوشی سے آج دو دو گز اچھلتا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : کلیات احسان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے