Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

نظر میں بھی نہیں اب گھومتا پیمانہ برسوں سے

پیر نصیرالدین نصیرؔ

نظر میں بھی نہیں اب گھومتا پیمانہ برسوں سے

پیر نصیرالدین نصیرؔ

MORE BYپیر نصیرالدین نصیرؔ

    نظر میں بھی نہیں اب گھومتا پیمانہ برسوں سے

    قسم کھانے کو بھی دیکھا نہیں مے خانہ برسوں سے

    نہ پینے کو ملی اک گھونٹ بے باکانہ برسوں سے

    نہیں اب کار فرما جرأت رندانہ برسوں سے

    سر صحرا جدھر دیکھو اداسی ہی اداسی ہے

    ادھر آیا نہیں شاید کوئی دیوانہ برسوں سے

    کبھی خلوت کبھی جلوت کبھی ہنسنا کبھی رونا

    مرتب کر رہے ہیں ہم بھی اک افسانہ برسوں سے

    یہ تکلیف قدم بوسی یہ انداز پذیرائی

    ہمارا منتظر تھا غالباً ویرانہ برسوں سے

    میسر آئی کیا ہم کو گدائی آپ کے در کی

    گزرتی ہے ہماری زندگی شاہانہ برسوں سے

    وہ اپنی ذات کے صحرا میں شاید تیرا جویا ہے

    نظر آیا نہیں احباب کو دیوانہ برسوں سے

    نصیرؔ اب اپنی آنکھیں اٹھ نہیں سکتیں کسی جانب

    مرے پیش نظر ہے اک تجلی خانہ برسوں سے

    مأخذ :
    • کتاب : کلیات نصیرؔ گیلانی (Pg. 702)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے