Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

دل سے پوچھا تو نے پایا یار کا کوئی سراغ

نعمتی پھلواروی

دل سے پوچھا تو نے پایا یار کا کوئی سراغ

نعمتی پھلواروی

MORE BYنعمتی پھلواروی

    دل سے پوچھا تو نے پایا یار کا کوئی سراغ

    اس نے دکھلایا ہزاروں داغِ غم بالائے داغ

    تھا حریمِ دل قدومِ یار سے رشکِ بہشت

    کتنے دن سے ہوگیا یہ خانۂ روشن بے چراغ

    راہ بتلاؤ کوئی اے ہم دمو بہرِ خدا!

    یار تک جانے کا ہم پاتے نہیں ہرگز مساغ

    موسمِ گل تھا و لے گلشن میں کچھ رونق نہ تھی

    تیرے آنے سے ہے اے گل اب گلستاں باغ باغ

    وقت ہے اب پھر سنبھل اس عمر کو ضائع نہ کر

    ورنہ ہم فارغ ہوئے ہم پر نہ تھا الا بلاغ

    نعمتیؔ اٹھ چل نبی کا شہرِ یثرب خوب ہے

    کب تلک ڈھونڈا کرے گا تو یہاں دل کا فراغ

    مأخذ :
    • کتاب : Al-Mujeeb, Phulwari Sharif (Pg. 39)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے