Font by Mehr Nastaliq Web
Sufinama

وہ کیا کہہ گئے مجھ کو کیا کہتے کہتے

پیر نصیرالدین نصیرؔ

وہ کیا کہہ گئے مجھ کو کیا کہتے کہتے

پیر نصیرالدین نصیرؔ

MORE BYپیر نصیرالدین نصیرؔ

    وہ کیا کہہ گئے مجھ کو کیا کہتے کہتے

    بھلا کہہ گئے وہ برا کہتے کہتے

    جہاں یہ نہ ہو آنکھ بھر آئے قاصد

    مری داستان وفا کہتے کہتے

    اٹھا تھا میں کچھ ان سے کہنے کو لیکن

    زباں رک گئی بارہا کہتے کہتے

    وہ سنتے مگر اے ہجوم تمنا

    ہمیں کھو گئے مدعا کہتے کہتے

    زمانے کی آغوش میں جا پڑے ہم

    زمانے کو نا آشنا کہتے کہتے

    پلائے گا ساقی تو پینی پڑے گی

    کسی دن روا ناروا کہتے کہتے

    نگاہیں جھکیں لب ہلے مسکرائے

    وہ چپ ہو گئے جانے کیا کہتے کہتے

    ادھوری رہی داستان محبت

    جہاں سے کوئی اٹھ گیا کہتے کہتے

    نصیرؔ ایسے اشعار ان کو سناؤ

    وہ شرمائیں بھی مرحبا کہتے کہتے

    مأخذ :
    • کتاب : کلیات نصیرؔ گیلانی (Pg. 702)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے