Sufinama

جا بجا تم بیٹھنے اٹھنے لگے جس تس کے پاس

شاہ رکن الدین عشقؔ

جا بجا تم بیٹھنے اٹھنے لگے جس تس کے پاس

شاہ رکن الدین عشقؔ

MORE BY شاہ رکن الدین عشقؔ

    جا بجا تم بیٹھنے اٹھنے لگے جس تس کے پاس

    کون کہتا ہے کہاں کس وقت کس دن کس کے پاس

    نام اگر منظور ہو تو یہ ہنر پیدا کرو

    امتیاز اخلاق ادب دلجوئیاں مجلس کے پاس

    لذتیں دونوں جہانوں کی ہوئیں اس کو نصیب

    ماہرو سیمیں بدن غنچہ دہن ہو جس کے پاس

    اہل ثروت ہیں جو رکھتے ہیں یہ دولت یاں کہاں

    داغ دل ٹکڑے جگر غم درد الم مفلس کے پاس

    عشقؔ جاوے کون گھر اس کے بجز منکر نکیر

    بے زباں بے گوش بیدل بے سخن بے حس کے پاس

    مآخذ:

    • Book: کلیات رکن الدین عشقؔ اور ان کی حیات و شاعری (Pg. 113)
    • Author: قریشہ حسین
    • مطبع: دی آزاد پریس، پٹنہ (1979)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY