Sufinama

عرش تا فرش سیر کر دیکھا

شاہ رکن الدین عشقؔ

عرش تا فرش سیر کر دیکھا

شاہ رکن الدین عشقؔ

MORE BY شاہ رکن الدین عشقؔ

    عرش تا فرش سیر کر دیکھا

    جلوہ گر تو ہوا جدھر دیکھا

    چشم تحقیق سے جہاں ڈھونڈا

    گبر ہوں تجھ سوا اگر دیکھا

    قشریوں کی سمجھ پہ حیراں ہوں

    دوسرا ہے کہاں کدھر دیکھا

    تیر کے نام پر تڑپتا ہے

    اس طرح کا کہیں جگر دیکھا

    آبلہ آبلہ ہوئے سب عضو

    نخل الفت نے یہ ثمر دیکھا

    خبر اس کی کو کس سے پوچھوں میں

    جس کو دیکھا سو بے خبر دیکھا

    اپنے ہم چشم سے لگا کہنے

    نالہ و آہ و شور و شر دیکھا

    ٹک ایک انصاف سے اگر دیکھو

    عشقؔ سا کوئی چشم تر دیکھا

    مآخذ:

    • Book : کلیات رکن الدین عشقؔ اور ان کی حیات و شاعری (Pg. 2)
    • Author : قریشہ حسین
    • مطبع : دی آزاد پریس، پٹنہ (1979)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY