Sufinama

مر ہی گئے جفاؤں سے قاتل تڑپ تڑپ

شاہ رکن الدین عشقؔ

مر ہی گئے جفاؤں سے قاتل تڑپ تڑپ

شاہ رکن الدین عشقؔ

MORE BY شاہ رکن الدین عشقؔ

    مر ہی گئے جفاؤں سے قاتل تڑپ تڑپ

    میں کیا کہ اور کتنے ہی بسمل تڑپ تڑپ

    پنجڑے کو توڑ سینے کے یہ مرغ دل مرا

    نکلے گا کوئی دم ہی میں غافل تڑپ تڑپ

    کہتے ہیں اضطراب ہے تیرا پسند یار

    آرام و صبر بھول جا گھائل تڑپ تڑپ

    میں کس روش سے تم کہو ممنون دل نہ ہوں

    پہنچا دیا ہے ان نے بہ منزل تڑپ تڑپ

    آرام زندگی تو گیا مدتوں سے عشقؔ

    دیکھیں پھر آگے کیا کرے یہ دل تڑپ تڑپ

    مآخذ:

    • Book : کلیات رکن الدین عشقؔ اور ان کی حیات و شاعری (Pg. 84)
    • Author : قریشہ حسین
    • مطبع : دی آزاد پریس، پٹنہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY